Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
تاریخ عالم > جدید دور
ہیروشیما پر...
جرمنی کی شکست
پرل ہاربر کی...
ہٹلر کا...
نہر سویز کی...
نہر پامانہ کا...
انقلاب روس
جنگ عظیم اول...
گھوڑے کے بغیر...
سمندر کی...
انقلاب فرانس
امریکا میں...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

تاریخ عالم

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

جرمنی کی شکست

 
   
 
جرمنی کی جس جنگی قوت کے متعلق عام خیال یہ ہوگیا تھا کہ اسے توڑا نہیں جاسکتا، وہ روس، شمالی افریقہ، سسلی، اٹلی اور بلقان میں بہت بری طرح پسپا ہوئی۔
جرمن آبدوزوں کی قوت 1943ء کے اواخر ہی میں توڑ دی گئی تھی۔
اتحادیوں نے چھ جون کو آدھی رات کے وقت ہوائی جہازوں کے ذریعے تین ڈویژن فوج جرمن استحکامات کے پیچھے اتار دی۔ اس میں ایک ڈویژن برطانوی اور دو امریکی۔
شربورگ اور رودبار کی دوسری بندر گاہوں پر قبضہ جمانے میں شدید مشکلات پیش آئیں، لیکن نارمنڈی پر قبضہ ہوگیا تو اتھادی فوجیں سیل کی طرح فرانس پر پھیل گئیں۔ پیرس کو خود وہاں کے رضا کار عساکر نے آزاد کرالیا۔
مشرقی جانب سے سٹالن کے طوفانی لشکر بڑھ چلے آرہے تھے، اٹلی میں بھی اتحادیوں کی پیش قدمی جاری تھی، اگرچہ اس کی رفتار تیز نہ تھی۔
آخر کار روسی برلن تک پہنچ گئے جہاں ہٹلر دیر تک لڑتا رہا حالاں کہ اب ایسی مزاحمت میں کوئی معقولیت نہ رہی تھی۔ پھر اس نے خودکشی کرلی۔ اتحادی فوجوں نے برلن پہنچنے میں کسی قدر دیر کی۔ روسی فوجوں نے برلن اور اس کے مشرقی علاقوں پر قبضہ کرکے قدم جمالیے۔  اتحادی اب تک اس دیر کے لیے پچھتاتے ہیں۔
جرمنی نے 7 مئی 1945ء کو ہتھیار ڈال دئیے تھے۔

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close