Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
تاریخ عالم > اسلامی تاریخ
بحر ظلمات میں...
انڈونیشیا کی...
قیام پاکستان
میسور کی...
قیصر کی شام...
مشرق اور مغرب...
فتح مکہ
صلح حدیبیہ
معرکہءبدر
مغلیہ سلطنت...
خشکی پر جہاز
تاتاریوں کو...
ہندوستان میں...
جامعہ ازہر کا...
الفانسو کی...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

تاریخ عالم

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

بیت المقدس کی فتح

 
   
 
عرب فوجیں شام اور فلسطین کے اکثر شہر فتح کر چکی تھیں اور وہ بیت المقدس کا محاصرہ کیے ہوئے تھیں۔ محصورین کو جب باہر سے کسی امداد کی امید باقی نہ رہی تو انہوں نے صلح کی درخواست کی، لیکن شرط یہ لگائی کہ خلیفہ خود آئیں اور ان کے ہاتھ سے عہد نامہ صلح لکھا جائے۔
حضرت ابو عبیدہ رضی اللہ عنہ عرب فوجوں کے سالار اعظم تھے۔ انہوں نے بیت المقدس والوں کی شرط کے متعلق دربار خلافت میں اطلاع دی تو حضرت عمر رضی اللہ عنہ صحابہ کے مشورے سے رجب 16ھ (اگست 637ء) میں مدینہ منورہ سے روانہ ہوئے۔
یرموک کے شمال میں جابیہ ایک مقام تھا، سالاروں نے وہاں پہنچ کر ملاقات کی اور تمام حالات سنائے۔ وہیں بیت المقدس کے نمائندوں سے صلح کی شرطیں طے ہوئیں۔ عہد نامے پر دستخط ہوجانے کے بعد حضرت عمر رضی اللہ عنہ نے بیت المقدس کا قصد کیا۔

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close