Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
تاریخ عالم > درمیانی دور
شارلیمین...
برطانیہ میں...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

تاریخ عالم

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

اگلا   Back
 

برطانیہ میں آزادی کے منشور پر دستخط

 
   
 
۱۲۱۵ء کی اس وجہ سے ایک ناقابل فراموش تاریخی سال بن گیا ہے کہ اس سال انگلستان کے بادشاہ جان نے اس فرمان پر دستخط کیے جو منشور اعظم کے نام سے مشہور ہے۔ یہ منشور امریکا اور برطانیہ کی شہری آزادی کا بنیادی پتھر بن گیا۔
جان عالی ظرف بادشاہ نہ تھا کہ اپنے کسی قیمتی حق کو خوش دلی سے چھوڑنے پر آمادہ ہوجاتا لیکن بہت سے لوگ اس کے مخالف تھے۔ وہ امیروں اور عوام کو عجیب و غریب منصوبوں سے پریشان کرتا۔ اس نے بھاری ٹیکس لگائے۔ صلیبی لڑائیوں اور جنگ فرانس کا خرچ عوام کے ذمے ڈال دیا۔ عدالتی نظام بگڑ گیا۔ کلیسا کو بھی شکایتیں پیدا ہوئیں۔ علاوہ ازیں جان کی نجی زندگی بھی رسوائی کے دھبوں سے آلودہ تھی۔
آخرکار امیروں نے اس کے سامنے جچے تلے مطالبے پیش کردئیے۔ ساتھ ہی دھمکی دی کہ اگر ان کے مطالبات مانے نہ گئے تو بغاوت ہوجائے گی۔ جان نے کھلی شکست سے بچنے کے لیے کلیسا کو کچھ رعایتیں دے دیں۔ ان کے لیے آزاد انتخاب کا اصول تسلیم کرلیا اور باشندگان لندن کو خاص حقوق عطا کیے۔ تاہم جو مطالبات امیر پیش کرچکے تھے۔ ان پر وہ مضبوطی سے جمے رہے۔ آخر کار 15 جون 1215ء کو خفیف ردو بدل کے بعد منشور اعظم پر دستخط ہوگئے۔ بعد ازاں تمام بادشاہ اس کی تصدیق کرتے رہے۔

 
اگلا   Back

Bookmark and Share
 
 
Close