Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
کہانیاں > اسلامی کہانیاں
عظمت کے مینار
بابرکت بچہ
غار والوں کی...
نیکی
چڑیا بی کے بچے
حقیقی خواب
بادشاہ کا...
کارنامے...
آخری قیمت
سونے کا تاج
رسول پاک صلی...
جنگی چال
عظمت کے مینار
تاریخ کے...
پانی دیکھ کر...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

کہانیاں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

جھوٹ کھل گیا

 
   
 
ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو اللہ تعالیٰ نے بہت اچھی عادتوں کا مالک بنایا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم میں ایک اچھی عادت یہ بھی تھی کہ کمزوروں کو سہارا دیا کرتے تھے۔ اس اچھی عادت کی وجہ سے لوگ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو پسند کرتے تھے اور مسلمان ہوجاتے تھے۔
مکے کے کافرنہیں چاہتے تھے کہ لوگ بتوں کی پوجا چھوڑیں اور مسلمان ہوجائیں۔ وہ سب سے کہتے پھرتے تھے کہ محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی بات مت سننا۔ یہ جادوگر ہیں تم پر جادو کردیں گے۔ وہ جھوٹ بول کر لوگوں کو اسلام سے دور رکھنا چاہتے تھے۔
ایک بار کیا ہوا کہ ایک بوڑھی عورت ایک گٹھڑی سامنے رکھے کھڑی تھی۔ اس نے ہماری نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو پاس سے گزرتے دیکھا تو کہا: بیٹا ذرا یہ میری گٹھڑی اٹھوا کر میرے سر پر رکھوادے۔
ہماری پیاری نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے دیکھا کہ بڑھیا کمزور ہے۔ اسے گٹھڑی اٹھانے میں تکلیف ہوتی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی گٹھڑی خود اٹھالی اور جس جگہ اسے جانا تھا وہاں لے گئے۔ بڑھیا راستے بھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو دعائیں دیتی رہی۔ جب آپ صلی اللہ علیہ وسلم اسے گھر پہنچا کر واپس آنے لگے تو کہنے لگی: تم بہت اچھے انسان ہو۔ دیکھو! میں نے سنا ہے ہمارے شہر میں ایک جادوگر رہتا ہے اس کا نام محمد (صلی اللہ علیہ وسلم) ہے۔ وہ اپنے آپ کو نبی کہتا ہے۔ اس سے ہرگز بات مت کرنا۔ نہیں تو وہ تم پر جادو کردے گا۔
ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے بڑھیا کی یہ بات سن کر فرمای: اماں میں ہی تو محمد ہوں۔۔
بڑھیا کہنے لگی:
اگر تم محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہو تو تم جادوگر نہیں ہوسکتے۔ تم تو بہت اچھے انسان ہو۔ پھر وہ بوڑھی عورت کلمہ بڑھ کر مسلمان ہوگئی۔

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close