Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
نظمیں > دیگر
حمزہ کی گیند
یہ ننھے...
یوم پاکستان
خرگوش
پاک وطن کے...
اسکول
محنت
اٹھو سونے...
محنت
بات کرو
کھانا کھاﺅ...
نیلو کا مٹھو
دہلی
راوی کے کنارے
چاند نگر سے...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

نظمیں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

چاند نگر سے خط آیا ہے

 
   
 
چاند نگر سے خط  آیا  ہے
دیکھنا اس میں کیا لکھا ہے

اس میں  لکھا ہے اے  بچو
میں  آکاش  پہ  بیٹھا  بیٹھا

تم سب  لوگوں  کی  دنیا کو
خاموشی سے دیکھ رہا ہوں

چاند    نگر  سے  خط  آیا  ہے
دیکھنا ہے اس میں کیا لکھا ہے

اس   میں   لکھا   ہے   یہ  دنیا
پہلے   کتنی     پیاری     پیاری

نیلی  برف  کے  گولے   جیسی
سمندر  سی  اچھی   لگتی  تھی

چاند   نگر  سے  خط  آیا   ہے
دیکھنا  اس  میں  کیا  لکھا  ہے

اس  میں   لکھا   ہے  اے  بچو
اب  یہ  خون  کی  رنگ جیسی

اب یہ آگ کے  شعلوں  جیسی
لال    نظر    آیا   کرتی   ہے

چاند  نگر سے خط  آیا  ہے
دیکھنا اس میں  کیا لکھا ہے

اس  میں  لکھا  ہے  دنیا  کو
کیوں تاریکی نے گھیرا ہے

نفرت کی گھنگھور، گھٹ کا
کیوں  کالا   بادل  چھایا  ہے

چاند  نگر  سے  خط  آیا ہے
دیکھنا  اس  میں کیا لکھا ہے

اس میں  لکھا  ہے  اے  بچو
پیار کے  روشن  دیے  جلائو

چاہے  میں  پڑ جائوں  ماند
فقط    تمہارا    پیارا   چاند

چاند  نگر سے  خط آیا  ہے
دیکھنا اس میں کیا لکھا ہے

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close