Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
نظمیں > دیگر
حمزہ کی گیند
یہ ننھے...
یوم پاکستان
خرگوش
پاک وطن کے...
اسکول
محنت
اٹھو سونے...
محنت
بات کرو
کھانا کھاﺅ...
نیلو کا مٹھو
دہلی
راوی کے کنارے
چاند نگر سے...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

نظمیں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

قالین اور سیاہی

 
  محمد امان خان دل  
 
ابو   نے    دیکھ   لی    ہے    قالین   پر   سیاہی
یارب   ہو  خیر  میری   لگنی    ہے   اب    پٹائی

مجھ پر ہی شک  کریں گےمیں یہ  بھی جانتا  ہوں
بچہ ہوں پھربھی گھر میں سب سے بڑا ہوں بھائی

پوچھیں گے جب وہ مجھ سے میں کیا جواب دوں گا
سوچا   تو   ذہن   میں    اک    ترکیب   میرے   آئی

کہہ دوں گا بے دھڑک میں چھوٹے کی ہے یہ حرکت
قالین    پر    گرائی    اس     نے     ہی     روشنائی

چھوٹی    بہن    نے    لیکن     بیڑا     مرا     ڈبویا
تھی    بات    جو    حقیقت   ان   کو   بتا   کے  آئی

ابو     دوات    بالکل     ٹیبل    کے    درمیاں   تھی
کرکٹ   کی   گیند  سے  یہ  بھائی  نے   ہے  گرائی

سن  کر یہ  بات اس کی  میں  نے کہا   کہ   جھوٹی
ابو   قسم    خدا    کی   میں    نے   نہیں     گرائی

پھر دوستو!   نہ  پوچھو، بعد  اس  کے  حال  میرا
تلقین   بھی   ہوئی   تھی ،  اور  ساتھ   ہی   پٹائی

کمرہ   ہے    بیٹھنے   کا   میدان  تو   نہیں  ہے
اتنی   سی  بات  بھی  کیا  تم  کو  سمجھ  نہ  آئی

بیٹے !  یہ   جانتے   ہو   کتنی  بری   ہے  عادت
غلطی  بھی کی ہے تم نے جھوٹی قسم بھی  کھائی

غصے  میں  ان  کو  اکثر  کہتے  ہوئے  سنا ہے
کرکٹ  عروج    پر  ہے  اور  طاق  پر  پڑھائی

گزار جو ورلڈ کپ  ہے اس سے سبق  تو سیکھو
کیسی  ہوئی ہے توبہ! کرکٹ میں  جگ  ہنسائی

کرکٹ میں کیا رکھا ہے کیا  کھیل کر کرو گے
کاغذ  قلم  سے کھیلو ہے  جس  میں  ہر بھلائی

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close