Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
نظمیں > مزاحیہ
بلی کا روزہ
بچارا بے قصور
بچ بچا کے
ہم فیل ہوگئے
چار مسافر
شریر ٹونی
یاد ہے
بھائی بھلکڑ
بلو کی مرغی
ٹوٹ بٹوٹ
مینا موری
ایک انوکھی...
حلوہ
ایک مزاحیہ...
بہت سے بچوں...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

نظمیں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

یاد ہے

 
  افق دہلوی  
 
گاتے جو تھے اسکول میں اب تک ترانہ یاد ہے
کھیلنا   ہمجولیوں    میں   کھلکھلانا    یاد   ہے
جب کبھی اسکول سے بھاگے تو یوں درگت بنی
آج   تک   بھولے   نہیں   وہ  مار  کھانا  یاد ہے
کمسنی  کا  دور  بھی  گزرا  تو  ان  اطوار سے
سخت  بارش  میں  بھی  وہ  پکنک  منانا یاد ہے
چھوٹی  باجی  اور  امی  سے  سدا  ان  بن رہی
چھوٹی  موٹی  بات  پر  بھی  روٹھ  جانا یاد ہے
بھاگ کر اسکول  سے بستہ  چھپاتے  تھے جہاں
آج   بھی   ہم   کو   ٹھکانہ   وہ   پرانا   یاد  ہے
مار  تو  ہم  نے  بہت  کھائی  مگر  مجبور تھے
دل   کا   کہنا   مان   کر   لڈو    چرانا   یاد  ہے
کی  غلط  کاموں پہ  ٹیچر نے  پٹائی  جب  کبھی
سسکیاں  بھر  بھر  کے  وہ  آنسو  بہانا  یاد  ہے
آج حسرت  ہم  کو  پڑھنے  کی  ستاتی  ہے  افق
جب  کہ  کل  اسکول  سے  وہ بھاگ جانا یاد ہے
 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close