Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
نظمیں > مزاحیہ
بلی کا روزہ
بچارا بے قصور
بچ بچا کے
ہم فیل ہوگئے
چار مسافر
شریر ٹونی
یاد ہے
بھائی بھلکڑ
بلو کی مرغی
ٹوٹ بٹوٹ
مینا موری
ایک انوکھی...
حلوہ
ایک مزاحیہ...
بہت سے بچوں...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

نظمیں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

چار مسافر

 
  آفاق صدیقی  
 
نکلے سفر  کو پیدل، وہ چار  ہم   سفر تھے
سب اپنے راستے اور منزل سے باخبر تھے

اک  فلسفی  تھا  ان  میں  دوسرا  تھا   نائی
پھر  تیسرا  سپاہی،  گنجا  تھا جس کا بھائی

جنگل  میں  رات  آئی، لازم  تھا ان کو سونا
لے  کر  چلے  تھے  اپنے وہ اوڑھنا  بچھونا

سوئے  کچھ اس طرح وہ، اس میں  ہوشیاری
ہر  ایک  کا تھا پہرا  دو گھنٹے  باری  باری

پہلے   سپاہی   جاگا،  پھر  آدھی  رات   آئی
وہ   سوگیا   تو  پہرا   دینے  لگا   تھا   نائی

لمبےتھےاورگھنے تھےجو بال اس کے سر پر
نائی   نے   مونڈ   ڈالے  تیز  استرا   پھیر  کر

بیدار فلسفی   کو   کر   کے   یہ   بولا   نائی
باری اب  آپ کی  ہے  اٹھ  جائو میرے بھائی!

جب   ہاتھ   فلسفی نے  چندیا  پہ  اپنی  پھیرا
آپے  سے ہو کے باہر نائی  کو اس نے گھیرا

یہ   کیا  غصب  کیا  ہے  ناحق  اسے   اٹھایا
باری تھی فلسفی  کی  گنجے کو  کیوں جگایا!
 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close