Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
نظمیں > مزاحیہ
بلی کا روزہ
بچارا بے قصور
بچ بچا کے
ہم فیل ہوگئے
چار مسافر
شریر ٹونی
یاد ہے
بھائی بھلکڑ
بلو کی مرغی
ٹوٹ بٹوٹ
مینا موری
ایک انوکھی...
حلوہ
ایک مزاحیہ...
بہت سے بچوں...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

نظمیں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

انگھوٹھے کی فریاد

 
   
 
میں روزی کا انگھوٹھا ہوں
اس کی  منہ  میں  رہتا ہوں
قیدی   بن   کر   جیتا   ہوں
پتلا     ہوتا     جاتا     ہوں
کس  شامت   کا  مارا   ہوں

حلوہ  ہوں ، نہ  پراٹھا  ہوں
میں روزی کا  انگوٹھا ہوں

ظلم  یہ   کیسا  ڈھاتی   ہے
مجھ  بیکس  کو  ستاتی ہے
جب  بھی  موقع   پاتی  ہے
مجھ  کو  چوسے  جاتی ہے
سالن   ہے  نہ   چپاتی   ہے

میں  ہی  اس  کا  کھانا  ہوں
میں  روزی کا  انگوٹھا ہوں

میری  عمر  ہوئی  چھ سال
اور  یہ    میرا   پتلا   حال
مجھ پر اس کی رال ہی رال
سوکھ  چلی  ہے میری کھال
دیکھ مجھےاب منہ سےنکال
 
ورنہ    تھانے   جاتا   ہوں
میں روزی کا انگوٹھا  ہوں

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close