Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
نظمیں > مزاحیہ
بلی کا روزہ
بچارا بے قصور
بچ بچا کے
ہم فیل ہوگئے
چار مسافر
شریر ٹونی
یاد ہے
بھائی بھلکڑ
بلو کی مرغی
ٹوٹ بٹوٹ
مینا موری
ایک انوکھی...
حلوہ
ایک مزاحیہ...
بہت سے بچوں...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

نظمیں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

میں ٹیوٹر تھا

 
  عنایت علی خان  
 
میں   ٹیوٹر  تھا  میں  گھر  گھر پڑھاتا   پھرتا  تھا
مدرسی      کی     بندریا     نچاتا    پھرتا       تھا

ہر  اک   قماش   کے   بچے   پڑھادیے  میں   نے
متاع     علم    کے    نلکے   لگادیے    میں    نے

جو  کھوٹے  سکے  تھے  وہ  بھی  چلادی میں نے
جو اے ایس ایس تھے سی ایس ایس بنادیے میں نے

میں  ٹیوٹر  تھا  میں  گھر  گھر  پڑھاتا  پھرتا   تھا
مدرسی      کی     بندریا      نچاتا     پھرتا     تھا

کہیں   میں   صوفے   پر   بیٹھا   کہیں  چٹائی  پر
کہیں     بٹھایا      گیا     کھری     چارپائی     پر

کہیں  سے   نکلا   کسی    لال   کی    پٹائی   پر
کسی    عزیز   نے    ٹرخا    دیا    مٹھائی    پر

میں  ٹیوٹر  تھا  میں  گھر  گھر  پڑھاتا  پھرتا تھا
مدرسی     کی     بندریا      نچاتا     پھرتا    تھا

جو  چھوٹا  بھائی   بھی  شاگرد   کا   کوئی  ہوتا
تو  وہ  بھی  آن  کے  میری  ہی  گود  میں  سوتا

بڑا  جو  پٹتا  تو  چھوٹا  بھی   پھوٹ  کر  روتا
میں  شیروانی   کے  دامن  کو  بیٹھ  کر  دھوتا

میں  ٹیوٹر  تھا  میں  گھر گھر پڑھاتا پھرتا تھا
مدرسی     کی    بندریا    نچاتا    پھرتا    تھا

نہ  کوئی  شام   مری   اپنی  شام  ہوتی  تھی
کہ میری  شام تو  بچوں  کے  نام  ہوتی  تھی

پہ  جب  کسی  کی  ممی  ہم  کلام  ہوتی تھی
تو میرے  علم  کی  پونجی  تمام  ہوتی  تھی

میں ٹیوٹر تھا میں گھر گھر پڑھاتا  پھرتا تھا
مدرسی    کی   بندریا    نچاتا   پھرتا    تھا

نہ   قدر   دان   کوئی   صاحب   نظر   پایا
نہ  گھاٹ ہی  کارہا  میں نہ کوئی  گھر  پایا

خطاب   پا  یا  تو  بچوں   کا   ٹیوٹر  پا  یا
میں اپنی  قوم  کے  بچے پڑھا کے  بھرپایا

میں ٹیوٹر تھا میں گھر گھر پڑھاتا پھرتا تھا
مدرسی    کی   بندریا   نچاتا   پھرتا    تھا

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close