Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
شخصیات > دیگر مسلم شخصیات
عبدالرحمن...
عمر بن...
مامون الرشید
سلطان محمود...
طارق بن زیاد
مولانا محمد...
قائد اعظم...
سلطان محمد...
غالب
امام غزالی
صلاح الدین...
ششیر شاہ سوری
سید احمد خاں
شیخ سعدی
مولانا روم
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

شخصیات

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

مولانا روم

 
   
 
مولانا جلال الدین رومی فارسی نظم میں فلسفہ اسلام اور تصوف اسلامی کے سب سے بڑے شارح گزرے ہیں۔
آپ کا بہت بڑا ادبی، روحانی اور دینی کارنامہ آپ کی مثنوی ہے جو تقریباً چوبیس ہزار شعار پر مشتمل ہے اور جس میں اسلامی فلسفہ و تصوف کے معارف نہایت دلآویزانداز میں بیان کیے گئے ہیں۔
مولانا روم اپنے مواعظ و ارشادات میں جن اخلاقی اور صوفیانہ خیالات کا اظہار کرتے تھے ان کو دیکھ کر ان کے ایک مرید حسن نے تجویز پیش کی کہ آپ ان کو نظم کرکے مدون کردیجئے۔ اس پرمولانا نے ان کو مثنوی لکھوانی شروع کردی۔ 1258 میں مولانا نے حسن کی مدد سے یہ کام شروع کیا اور صرف تھوڑے سے وقفے کے سوا اپنا سارا وقت اسی پر صرف کیا یہاں تک کہ یہ عظیم الشان کتاب تکمیل کو پہنچ گئی۔ اس مثنوی کے چھ دفتر ہیں۔ ایک ساتواں بھی ہے جو غیر مستند اور الحاق سمجھا جاتا ہے۔
مثنوی کی تکمیل کے تھوڑے عرصے بعد مولانا روم 17 دسمبر 1273 کو رحلت کرگئے اور قونیہ میں دفن ہوئے۔

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close