Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
شخصیات > صحابہ
حضرت امیر...
حضرت عائشہ...
حضرت ابوبکر...
حضرت سعد بن...
حضرت فاطمتہ...
حضرت خدیجہ...
حضرت حسین رضی...
حضرت خالد بن...
حضرت علی رضی...
حضرت عثمان...
حضرت عمر...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

شخصیات

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

حضرت فاطمتہ الزہرا رضی اللہ عنہا

 
   
 
حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا صورت و سیرت، چال ڈھال اور لب و لہجہ میں رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم سے مشابہ تھیں۔ صبر و رضا کی تصویر تھیں۔ عائشہ رضی اللہ عنہا فرماتی ہیں کہ میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد فاطمہ رضی اللہ عنہا سے بڑھ کر راست گو کوئی نہیں دیکھا۔ سادگی، حیا اور پرہیزگاری میں امت کی تمام خواتین کی سر تاج تھیں۔
مکے میں پیدا ہوئیں۔ بچپن اپنی والدہ حضرت خدیجہ رضی اللہ عنہا کے زیر تربیت گزرا، کھیلنا، کودنا اور باہر آنا جانا پسند نہ تھا۔ گھر میں ماں کے پاس ہی بیٹھی رہتیں۔ رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم کو اپنی ان صاحبزادی سے بہت پیار تھا۔ ہجرت کے دوسرے سال مدینہ میں حضرت علی رضی اللہ عنہ سے نکاح ہوا۔ رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم اور ان کے عزیزوں کی درویشی کا یہ عالم تھا کہ دو جہاں کے بادشاہ کی بیٹی کے جہیز میں ایک چارپائی، چمڑے کا ایک گدا جس میں کھجور کے پتے بھرے ہوئے تھے، مٹی کے دو گڑھے، ایک چھاگل، ایک مشکیزہ اور دو چکیاں تھیں۔ اسی سامان سے پوری عمر بسر کردی۔
رسول پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا سے فرمایا تھا کہ میرے بعد خاندان میں سب سے پہلے تم آکر مجھ سے ملو گی۔ چنانچہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کے وصال کے صرف چھ مہینے بعد حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا صرف انتیس برس کی عمرمیں فوت ہوگئیں۔
امام حسن رضی اللہ عنہ اور امام حسین رضی اللہ عنہ آپ ہی کے صاحبزادے تھے اور یہ حضرت فاطمہ رضی اللہ عنہا کی تربیت ہی کا اثر تھا کہ ہمیشہ حق پر قائم رہے اور حق کے لیے جان دی۔ حضرت حسن رضی اللہ عنہ کو زہر دیا گیا اور حضرت حسین رضی اللہ عنہ میدان کربلا میں شہید ہوئے۔

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close