Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
دریافت > مہم جوئی
وائکنگز کی...
گرین لینڈ
انٹارکٹیکا...
کوہ ایورسٹ کی...
نئی دنیا
قطب شمالی پر...
کرہ ارض کے...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

دریافتیں

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

کرہ ارض کے گرد پہلا چکر

 
   
 
ستمبر 1519ء میں پانچ جہازوں کا ایک بیڑا میجی لن (ولادت تخمیناً 148ء وفات 1521ء) کی سرکردگی میں سان لوگر (جنوبی ہسپانیہ) کی بندرگاہ سے کرہ ارض کا چکر لگانے کے لیے روانہ ہوا۔ تاریخ میں اپنی نوعیت کا یہ پہلا سفر تھا۔ تین سال بعد اس بیڑے میں سے صرف ایک جہاز جس کا نام وٹوریا تھا۔ سامان لوکر میں واپس آیا اور اس میں صرف اٹھارہ آدمی تھے۔ گویا پورے بیڑے میں سے یہی ایک جہاز اور یہی چند آدمی باقی رہ گئے تھے۔ خود میجی لین بھی اثنائے سفر میں کام آگی تھا۔
1817ء میں ہسپانیہ چلاگیا۔ جہاں بادشاہ چارلس نے اس کی تجویز منظور کرکے پانچ جہاز اس کے حوالے کردئیے۔
ہسپانیہ سے روانہ ہو کر وہ دو مہینے اور نو دن میں اٹلانٹک کو عبور کرکے برازیل (جنوبی امریکا) کی ایک بندرگاہ میں جا پہنچا۔ پھر وہ ساحل کے ساتھ ساتھ جنوبی سمت کو روانہ ہوا۔ سردیوں کا موسم پٹے گو نیا کی ایک بندرگاہ میں گزارا۔ 1520ء کی آخری سہ ماہی میں اس نے پھر لنگر اٹھایا اور جنوبی امریکا کے جنوبی گوشے میں تین سو ساٹھ میل لمبی آبنائے سے گزر کر بحرالکاہل میں داخل ہوگیا۔ یہ آبنائے بعد میں اسی کے نام پر موسوم ہوئی۔
اپنے بیڑے کے افسروں سے مشورے کے بعد وہ پھر روانہ ہوا۔ بحرالکاہل کے سفر میں اس کے آدمیوں کو فساد خون، بھوک اور پیاس کے ہولناک مصائب نے پریشان کیے رکھا، لیکن ہمت مرداں مدد خدا، اٹھانوے روز کی جدوجہد کے بعد وہ جزائر ماریا ناز میں پہنچ گیا۔ وہاں سے اشیائے خورو نوش لے کر چلا تو 7 اپریل 1521ء کو وسطی فلی پین کے مشہور مقام سیبو میں لنگر انداز ہوا۔ وہاں کے ایک مقامی سردار نے اہل ہسپانیہ کی ایک بہت بڑی تعداد کو موت کے گھاٹ اتاردیا۔ مقتولین میں خود میجی لن بھی تھا۔ صرف ایک جہاز وٹوریا یا سلامت وطن پہنچا۔


 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close