Content on this page requires a newer version of Adobe Flash Player.

Get Adobe Flash player

صفحہ اول
لائبریری
مضامین > معلوماتی
شہاب ثاقب
انوکھے درخت
دریائے نیل
شارک
طویل و مختصر...
لو سے بچنے کے...
سنہری...
شتر مرغ۔ سب...
پیاز کے عرق...
کھیدا
دریائے...
فیئری میڈوز
تاریخ لاہور...
راکا پوشی
ریڈیو۔۔۔ ایک...
دعا
سرگرمیاں
انکل شائن
رسالہ
کیا آپ جانتے ہیں ؟
گیمز
تازہ ترین خبریں
 

مضامین

 
   

 

 

 
Bookmark and Share

Next   Back
 

دنیا کے مشہور شہر

 
  خواجہ خالد ظہیر  
 
دنیا کا قدیم ترین شہر جیریکو ہے۔ وہاں 9000 برس سے لوگ رہ رہے تھے۔ عراق او شام میں بھی بہت سے قدیم شہر ہیں۔ جس زمانے میں یورپ کے لوگ غاروں میں رہا کرتے تھے اس وقت بابل بہت ترقی یافتہ اور خوب صورت شہر تھا۔ وہ جھولنے والے باغات کی وجہ سے بھی بہت مشہور تھا۔ پاکستان کے تاریخی قدیم شہر موئن جودڑو میں اب 4000 برس پہلے بھی پائپ کے ذریعے سے پانی کی آمد اور نکاسی کا اعلیٰ نظام موجود تھا۔ یورپ کے بہت سے شہروں میں اب سے صرف ڈیڑھ سو برس پہلے پانی کا ایسا نظام قائم کیا گیاتھا۔
دنیا کا سب سے بڑا شہر میکسیکو سٹی ہے۔ وہاں کی آبادی 20 ملین سے زیادہ ہے۔  1975ء میں وہاں صرف 10 ملین باشندے رہتے تھے، جب کہ  1950ء میں وہاں آبادی صرف تین ملین تھی۔
نیو یارک پہلے ولندیزیوں کی نو آبادی تھی اور انہوں نے اس شہر کا نام ہالینڈ کے مشہور شہر ایمسٹرڈیم کےنام پر نیو ایمسٹرڈیم رکھا تھا۔  1664ء میں اسے انگریزوں نے لے لیا اور اس کا نام شار چالس دوم کے بھائی جیمز ڈیوک آف یارک کے نام پر نیو یارک رکھ دیا۔
سینٹ پیٹر برس نامی شہر نے گزشتہ ایک صدی میں کئی مرتبہ اپنا نام تبدیل کیا۔ 1917ء میں روسی انقلاب کے بعد سینٹ پیٹرز برگ کا نام تبدیل کرکے لین گراڈ رکھ دیا گیا۔ جب لینن کا انتقال ہوگیااور اسٹالن برسر اقتدار آیا تو اس شہر کان ام ت بدیل کرکے اسٹالن گراڈ رکھ دیا گیا۔ پھر اسٹالن کے مرتے ہی اسے دوبارہ لینن گراڈ کہا جانے لگا۔ س کے بعد 1990ء کی دہائی میں روس میں کمیونزم کا خاتمہ ہوگیا اور یہ شہر دوبارہ سینٹ پیٹرز برگ بن گیا۔
بولیویا کے درالحکومت لاپاز میں آگ لگ جانے کا کوئی خطرہ نہیں۔ جنوبی امریکا کا یہ شہر سطح سمندر سے تقریباً 4000 میٹر کی بلندی پر واقع ہے۔ اتنی بلندی پر آکسیجن کی اتنی مقدار نہیں ہوتی کہ کسی شے کو جلاسکے۔ اس کے باوجود لاپاز میں آگ بجھانے کی سروس موجود ہے کہ شاید کبھی اس کی ضرورت پڑ جائے۔
اسپینی زبان میں لاپاز کے معنی امن کے ہیں، لیکن بولیویا امن سے کوسوں دور ہے۔ وہاں اب تک 100 مرتبہ انقلابات آچکے ہیں، دنیا کے کسی بھی ملک کے مقابلے میں سب سے زیادہ ہیں۔
قاہرہ میں ٹیلے فون کا نظام اس قدر خراب تھا کہ 1970ء کی دہائی میں وہاں بہت کم لوگوں کے پاس ٹیلے فون تھے اور ٹیلے فون ڈائریکٹری ہوتی ہی نہیں تھی۔ وہاں کے تاجروں کو کسی دوسرے ملک ٹیلے فون کرنے کے لیے ہوائی جہاز کے ذریعے یونان جانا پڑتا تھا۔
کہا جاتا ہے کہ آسٹریلیا میں واقع شہر ملبورن یونانی شہر ایتھنز کے بعد دوسرا سب سے بڑا یونانی شہر ہے۔ ایتھنز کا دارالحکومت ہے۔
کینیڈا میں کوئی شخص بھی اپنے دارالحکومت کے نام کے انتخاب پر متفق نہں تھا، چاہے وہ کیوبک، کنگسٹن، مانٹریال یا ٹورنٹو کا باشند ہو۔  1858ء میں ملکہ وکٹوریہ سے  فیصلہ کرنے کی درخواست کی گئی تو انہوں نے اوٹاوہ منتخب کیا، لیکن اس فیصلہ سے کسی کو بھی خوشی نہیں ہوئی۔
لندن شہر کے روڈ ایک بھی نہیں ہے، بلکہ ہر جگہ گلیاں ہیں۔ گریٹرلندن آنے والی سڑکیں شہر کے اندر پہنچ کر اسٹریٹس(گلیاں) بن جاتی ہیں، یعنی وہاں سڑک کو گلی کہا جاتا ہے۔
وینس اپنی خوب صورت عمارتوں اور بے شمار نہروں کی وجہ سے مشہور ہے۔ برمنگھم میں وینس سے بھی زیادہ تعداد میں نہریں موجود ہیں، لیکن وہ اتنا مشہور نہیں ہے۔
لاس اینجلس میں وہاں کے باشندوں کے مقابلے میں موٹر کاروں کی تعداد زیادہ ہے۔ ایک اندازے کے مطابق شہر کا ایک تہائی حصہ سڑکوں نے گھیر رکھا ہے، جب کہ ایک تہائی کار پارکنگ کے لیے مخصوص ہے، یعنی شہر کے باشندوں کے رہنے اور کام کرنے کے لیے صرف ایک تہائی حصہ بچا ہے۔ لاس اینجلس کا مطلب ہے فرشتے، لیکن وہاں کے باشندے فرشتے نہیں ہیں پورے شمالی امریکا میں اس شہر کے اندر جرائم کی تعداد سب سے زیادہ ہے۔ ریاست ہائے متحدہ امریکا میں وہاں کے باشندوں کے مقابلے میں بندوقوں کی تعداد زیادہ ہے۔ جاپان کا دارالحکومت ٹوکیو دنیا کے سب سے بڑے بھیڑ بھاڑ والے شہر میں سے ایک ہے۔ شہر کی ریل گاڑی میں مسافروں کو بٹھانے کے لیے رکھے جانے والے ملازمین کو پشرز کہتے ہیں۔

 
Next   Back

Bookmark and Share
 
 
Close